More

    Choose Your Language

    خودکشی کے خیالات سے کیسے بچا جائے؟ کیا آپ زندگی سے تنگ آ چکے ہیں؟

    قرآن کوگنیٹو تھراپی کا استعمال کرتا ہے، ایک علاج جو جدید نفسیاتی ماہرین کے ذریعے استعمال کیا جاتا ہے، تاکہ آپ اپنی مشکلات کے بارے میں سوچنے کے انداز کو بدل کر امید اور سکون پیدا کریں۔ یہ حیرت انگیز ہے کہ قرآن، جو 1400 سال پہلے نازل ہوا تھا، علمی علاج کا استعمال کرتا ہے۔

    کیا زندگی آپ کو بوجھ کی طرح محسوس کرتی ہے؟ کیا آپ کے پاس خودکشی کے خیالات ہیں؟ کیا ایسا لگتا ہے کہ تمام بری چیزیں کبھی ختم نہیں ہوں گی؟ کیا آپ اس برے مرحلے سے باہر آنا چاہتے ہیں؟ کیا آپ خودکشی کے خیالات سے بچنا چاہتے ہیں؟ اگر ہاں، تو یہ مضمون آپ کے لیے ہے۔

    اس مضمون میں، ہم قرآن کے 93ویں باب کو دیکھیں گے، جو ان تمام لوگوں کو امید اور تسلی دیتا ہے جو افسردہ، غمگین ہیں اور آپ کو خودکشی کے خیالات سے بچنے میں مدد کرتا ہے۔

    اللہ تعالیٰ نے قرآن کا یہ باب حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر ان کی زندگی کے ایک اداس دور میں نازل کیا۔

    زندگی میں اچھے اور برے کا متبادل

    صبح کی سورج کی قسم اور رات کی قسم جب وہ اندھیری ہو جائے!

    قرآن باب 93 آیات 1-2

    باب کا آغاز ان آیات سے ہوتا ہے جن میں اللہ تعالیٰ نے سورج کی روشنی کی قسم کھائی ہے جو صبح اور رات کے اندھیرے میں ظاہر ہوتی ہے۔

    جس طرح دن اور رات ایک دوسرے سے بدلتے ہیں، اسی طرح زندگی میں اچھے اور برے کا متبادل ہوتا ہے. کسی نے کئی سالوں سے صرف خوشی حاصل نہیں کی ہے، اور کسی نے کئی سالوں سے صرف دکھ ہی نہیں اٹھائے ہیں۔ یہ آیات زندگی کی اس حقیقت کی طرف ہماری توجہ دلاتی ہیں۔

    رات کی تاریکی کے بعد دن کی روشنی آتی ہے

    جس طرح آپ رات کی تاریکی کا تجربہ کرنے کے بعد دن کی روشنی کو دیکھتے ہیں، آپ کو تمام مشکلات کے بعد خوشيون کا تجربہ ہوگا۔ یاد رکھیں، سرنگ کے آخر میں ہمیشہ روشنی رہتی ہے۔

    خدا نے آپ کو نہیں چھوڑا ہے

    آپ کے خدا نے آپ کو ترک نہیں کیا اور نہ ہی وہ آپ سے نفرت کرتا ہے۔

    قرآن مجید باب 93 آیت 3

    جب آپ مشکل وقت سے گزرتے ہیں، تو آپ محسوس کر سکتے ہیں کہ خدا نے آپ کو چھوڑ دیا ہے اور یہ سب چیزیں اس لیے ہوتی ہیں کہ خدا آپ سے نفرت کرتا ہے۔ یہ آیت آپ کو تسلی دیتی ہے کہ خدا نے آپ کو نہیں چھوڑا اور وہ آپ سے نفرت نہیں کرتا۔

    مشکل وقت عارضی ہوتے ہیں

    اگلی دو آیات آپ کو بتاتی ہیں کہ آپ اس زندگی میں جو بھی مشکلات کا سامنا کرتے ہیں وہ عارضی ہیں۔

    (جو ابھی آنا باقی ہے) مستقبل آپ کے لیے ماضی سے بہتر ہوگا۔ تمہارا خدا تمہیں اتنا دے گا کہ تم مطمئن ہو جاؤ گے

    قرآن باب 93 آیات 4-5

    اپنی زندگی کے بارے میں سوچنے کے لیے ایک لمحہ نکالیں۔ ان تمام مشکلات کو اپنے ذہن میں لائیں جن سے آپ ماضی میں گزرے ہیں۔ اس بارے میں سوچیں کہ آپ نے ان تمام مشکلات پر کامیابی سے کیسے قابو پایا۔ یہ آیات آپ کو یہ امید دلاتی ہیں کہ آپ یقیناً اس مشکل پر بھی قابو پا لیں گے اور ایک عظیم مستقبل حاصل کر لیں گے۔

    خدا نے آپ کی مدد کی

    کیا اس نے آپ کو یتیم نہیں پایا اورآپ کو پناہ نہیں دی؟ کیا اس نے آپ کو کھویا ہوا نہیں پایا اور پھر آپ کو رہنمائی کی؟ کیا اس نے آپ کو محتاج نہیں پایا اور آپ کو بے نیاز نہیں کیا؟

    قرآن باب 93 آیات 6-8

    جب سے آپ بچپن میں تھے خدا نے آپ کی بہت سے طریقوں سے مدد کی ہے۔ خدا کی مدد اور مہربانی کے بغیر آپ زندگی میں اس حد تک کبھی نہیں پہنچ سکتے تھے۔ اگلی تین آیات آپ سے پوچھتی ہیں کہ آپ کیوں سوچتے ہیں کہ خدا جس نے ماضی میں بہت سے طریقوں سے آپ کی مدد کی ہے، اب آپ کی مدد نہیں کرے گا؟ خدا سے امید کبھی نہ چھوڑیں! آپ خودکشی کے خیالات سے بچ سکتے ہیں اور ڈپریشن سے باہر آ سکتے ہیں، اگر آپ ان مختلف طریقوں کے بارے میں سوچنا شروع کر دیں جن سے ماضی میں خدا نے آپ کی مدد کی ہے۔

    کروڑوں لوگ تکلیف میں ہیں

    پس یتیم کے ساتھ سختی نہ کرو۔ (مدد مانگنے والے سے) نفرت نہ کرو۔ اپنے خدا کی نعمتوں کا اعلان کرو۔

    قرآن باب 93 آیات 9-11

    دنیا میں کروڑوں لوگ ہیں جو آپ سے بھی بدتر مشکلات کا سامنا کر رہے ہیں۔ بہت سے لوگوں کے پاس گھر تک نہیں ہے۔ بہت سے لوگوں کو کھانے کے لیے کھانا نہیں ملتا۔ بہت سے لوگ ایسے ہیں جو دائمی بیماریوں میں مبتلا ہیں۔ بہت سے لوگ بستر پر ہیں اور انگلی بھی نہیں اٹھا سکتے۔ دوسروں کے دکھوں سے اپنے دکھ کا موازنہ کریں۔

    آپ کو احساس ہوگا کہ آپ جتنے بھی مشکلات سے گزر رہے ہیں وہ اتنی مشکل نہیں ہیں جتنی کہ بہت سے دوسرے گزرتے ہیں۔ آخری تین آیات آپ کو اس حقیقت کی یاد دلاتی ہیں اور آپ سے مطالبہ کرتی ہیں کہ ضرورت مندوں کی مدد کرکے خدا کا شکر ادا کریں۔

    جب آپ مشکل وقت سے گزر رہے ہوں گے تو آپ شاید ہی دوسروں کی مدد کرنے کے بارے میں سوچیں گے۔

    قرآن آپ کو ایسے کام کرنے کی ترغیب دے رہا ہے جو دوسروں کے لیے مفید ہوں۔ یہ رویے میں تبدیلی ایک افسردہ شخص یا کسی ایسے شخص کے لیے جو خود کشی پر سنجیدگی سے غور کر رہا ہے حیرت انگیز ہے۔

    آپ سوچ سکتے ہیں، میرے سوچنے کے انداز میں یا دوسروں کی مدد کرنے سے میرے ڈپریشن میں کیسے تبدیلی آئے گی؟ آپ کو اس سوال کا جواب تب مل جائے گا، جب آپ "کوگنیٹو تھراپی”

    کوگنیٹو تھراپی

    امریکن سائیکولوجیکل ایسوسی ایشن کی ویب سائٹ کا ایک مضمون کہتا ہے:

    علمی سلوک تھراپی نفسیاتی علاج کی ایک شکل ہے جو ڈپریشن، اضطراب کی خرابی، شراب اور منشیات کے استعمال کے مسائل، ازدواجی مسائل، کھانے کی خرابی، اور شدید ذہنی بیماری سمیت متعدد مسائل کے لیے موثر ثابت ہوئی ہے۔

    حوالہ: امریکن سائیکولوجیکل ایسوسی ایشن

    وہ کوگنیٹو تھراپی میں کیا کرتے ہیں؟

    کوگنیٹو سلوک تھراپی میں مریضوں کے سوچنے کے انداز کو تبدیل کرنے کی کوششیں شامل ہیں۔ استعمال ہونے والی حکمت عملی یہ ہیں:

    1. اپنی سوچ میں بگاڑ کو پہچاننا سیکھنا جو مسائل پیدا کر رہے ہیں، اور پھر حقیقت کی روشنی میں ان کا دوبارہ جائزہ لینا۔
    2. دوسروں کے رویے اور حوصلہ افزائی کی بہتر سمجھ حاصل کرنا۔
    3. مشکل حالات سے نمٹنے کے لیے مسئلہ حل کرنے کی مہارت کا استعمال۔
    4. اپنی صلاحیتوں پر اعتماد کا زیادہ احساس پیدا کرنا سیکھنا۔

    کوگنیٹو تھراپی کتنی مؤثر ہے؟

    مضمون میں کہا گیا ہے کہ:

    متعدد تحقیقی مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ کوگنیٹو تھراپی کام کرنے اور زندگی کے معیار میں نمایاں بہتری کا باعث بنتا ہے۔ بہت سے مطالعات میں، کوگنیٹو تھراپی کو نفسیاتی تھراپی یا نفسیاتی ادویات کی دوسری شکلوں سے زیادہ مؤثر ثابت کیا گیا ہے۔

    حوالہ: امریکن سائیکولوجیکل ایسوسی ایشن

    درحقیقت، کوگنیٹو تھراپی ایک ایسا نقطہ نظر ہے جس کے لیے کافی سائنسی ثبوت موجود ہیں کہ طریقے تیار کیے گئے ہیں جو دراصل تبدیلی پیدا کرتے ہیں۔ اس طریقے سے، تھراپی نفسیاتی علاج کی بہت سی دوسری شکلوں سے مختلف ہے۔

    حوالہ: امریکن سائیکولوجیکل ایسوسی ایشن

    قرآن کوگنیٹو تھراپی کا استعمال کرتا ہے:

    اگر آپ قرآن کے اس باب میں استعمال کیے گئے طریقہ کار کے بارے میں غور سے سوچیں گے تو آپ دیکھیں گے کہ قرآن آپ کی زندگی میں آنے والی مشکلات کے بارے میں سوچنے کے انداز کو تبدیل کرنے کے لیے کوگنیٹو تھیراپی کا استعمال کرتا ہے اور ایک طرز عمل میں تبدیلی بھی متعارف کراتی ہے جو آپ کو ایسے اعمال کرنے کی ترغیب دیتی ہے جس سے دوسروں کی مدد ہوتی ہے۔

    یہ حیرت انگیز ہے کہ قرآن جو 1400 سال پہلے نازل ہوا تھا، کس طرح کاگنیٹو تھیراپی کا استعمال کرتا ہے، جو کہ جدید دور کے ماہر نفسیات کے ذریعہ اختیار کردہ علاج کی تکنیک ہے۔

    خودکشی کے خیالات سے بچیں اور ڈپریشن سے باہر آئیں

    اس میں کوئی شک نہیں کہ قرآن کی تجویز کردہ فکری عمل اور طرز عمل میں تبدیلی کو اپنا کر انسان اپنے ڈپریشن سے نکل سکتا ہے اور خودکشی کے خیالات سے بھی بچ سکتا ہے۔

    قرآن کیا ہے؟

    مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ قرآن آخری صحیفہ ہے جو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل ہوا، جو آخری نبی ہیں۔ پورا قرآن خدا کا کلام ہے اور وہ ہدایت نامہ ہے جو انسانیت کو زندگی کے تمام پہلوؤں پر رہنمائی فراہم کرتا ہے۔

    اے بنی نوع انسان! یقیناً تمہارے پاس تمہارے خدا کی طرف سے مخلصانہ نصیحت آئی ہے، جو دلوں میں ہے اس کی شفا ہے، ہدایت اور رحمت ہے ان لوگوں کے لیے جو (اس پر) ایمان رکھتے ہیں۔

    القرآن باب 10 آیت 57

    اچھے لوگوں کو تکلیف کیوں ہوتی ہے؟ برے لوگوں کو سزا کیسے نہیں ملتی؟ جنت اور دوزخ، کیا وہ حقیقی ہیں؟ اگر آپ ان سوالات کے قرآن کے جوابات جاننا چاہتے ہیں تو آپ آن لائن قرآن کا انگریزی ترجمہ پڑھ سکتے ہیں https://quran.com/

    آپ کو ان مضامین میں دلچسپی ہو سکتی ہے

    ایک خدا يا بہت سے خدا؟

    کیا موت کے بعد زندگی ہے؟

    کیا قرآن ہندوؤں کو کافر کہہ کر گالی دے رہا ہے؟

    کیا ہندوستان مسلم ملک بنے گا؟

    یکساں سول کوڈ – صرف مسلمانوں کا مسئلہ نہیں۔

    دوسرے لوگ كيا پڑھ رہے ہیں۔

    سب سے زیادہ مقبول