More

    Choose Your Language

    سب سے زیادہ مقبول

    بہت مذہبی لیکن برا آدمی

    اس دنیا میں، ہم بہت سے لوگ دیکھتے ہیں جو بہت مذہبی ہیں لیکن ساتھ ہی، بہت برے لوگ ہیں۔ ایسا کیوں ہوتا ہے؟ زیادہ تر لوگوں نے خدا اور اس کے انصاف کو غلط سمجھا ہے۔ وہ سوچتے ہیں کہ بہت ساری عبادتیں کرنے سے خدا انسانیت کے خلاف ان کے گناہوں کو نظر انداز کر دے گا۔ کیا یہ رویہ درست ہے؟

    تعارف

    "بہت مذہبی لیکن برا شخص” ایک صنعت تضاد کی طرح لگ سکتا ہے لیکن بدقسمتی سے، یہ ایک حقیقت ہے۔ اس دنیا میں، ہم بہت سے لوگ دیکھتے ہیں جو بہت مذہبی ہیں لیکن ساتھ ہی، بہت برے لوگ ہیں۔ کیا انہوں نے خدا اور اس کے انصاف کو غلط سمجھا ہے؟ آئیے معلوم کرتے ہیں۔

    مذہب کے بارے میں ہمارا رویہ کیا ہے؟

    جب مذہب پر بحث کی جاتی ہے تو بہت سے لوگ پہلے عبادت کی مختلف شکلوں پر غور کرتے ہیں۔ زیادہ تر لوگ روحانی پہلوؤں اور اپنی ذاتی زندگی سے متعلق دیگر معاملات جیسے پیدائش کے بعد کی رسومات، شادی، طلاق، خاندانی معاملات، صحت مند اور کامیاب زندگی گزارنے، موت کے بعد جنازہ وغیرہ پر تفصیل سے جاتے ہیں لیکن، وہ زیادہ توجہ نہیں دیتے کہ وہ اپنے ساتھی انسانوں کے ساتھ کس طرح برتاؤ اور تعامل کرتے ہیں۔

    کچھ لوگ عقیدت سے خدا کی عبادت کرتے ہیں لیکن لوگوں کو دھوکہ دیتے ہیں۔ کیا وہ اللہ کے انصاف سے بھاگیں گے؟

    بہت سے لوگ ہیں جو خدا کی عبادت کرتے ہیں لیکن ساتھی انسانوں کے ساتھ ان کا برتاؤ اور تعامل گناہوں اور جرائم سے بھرا ہوا ہے۔ وہ سوچتے ہیں کہ خدا کی طرف سے انہیں معاف کر دیا جائے گا کیونکہ وہ اپنی عبادت میں انتہائی لگن اور پابند ہیں۔

    مثال کے طور پر: کچھ لوگ عبادت گاہوں کو کروڑوں روپے، سونا اور چاندی کا عطیہ دیتے ہیں، یہ سوچتے ہوئے کہ انہوں نے ساتھی انسانوں کے خلاف جو گناہ کیے ہیں وہ ان کے عطیہ کی وجہ سے معاف ہو جائیں گے۔ کچھ لوگ انسانیت کے خلاف اپنے گناہوں کو دھونے کے لیے مقدس دریا میں ڈبکی لگاتے ہیں۔ کچھ اپنے گناہوں کا اعتراف پادری کے سامنے یہ سوچ کر معافی مانگتے ہیں کہ اس سے انہیں خدا کی طرف سے معافی مل جائے گی۔

    کیا وہ خدا کے انصاف سے بھاگیں گے؟ جواب ہے نہیں!

    اسلام ان لوگوں کے بارے میں کیا کہتا ہے جو انسانیت کے خلاف گناہ کرتے ہیں لیکن خدا کی عبادت کرتے ہیں؟

    آئیے کچھ بنیادی باتوں سے گزرتے ہیں۔ اس سے اوپر والے سوال کے جواب کو سمجھنے میں مدد ملے گی۔

    اسلام میں ہم سمجھتے ہیں کہ خدا نے انسانوں کے فرائض کو دو حصوں میں تقسیم کیا ہے۔ وہ ہیں:

    1. خدا کے حقوق
    2. ساتھی انسانوں کے حقوق

    خدا کے حقوق کیا ہیں؟

    عبادات جیسے نماز، روزہ، حج کے لیے جانا وغیرہ حقوق الٰہی کے تحت آتے ہیں۔ ایک شخص سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ خلوص اور عقیدت کے ساتھ یہ کام کرے۔

    انسانوں کے حقوق کیا ہیں؟

    خدا ہم سے توقع رکھتا ہے کہ ہم اپنے ساتھی انسانوں کے ساتھ بہترین سلوک کریں۔ اس میں دوسروں کے ساتھ اچھا ہونا، دوسروں کے لیے رحم اور فکرمندی اور دوسروں کو کسی بھی طرح سے نقصان نہ پہنچانا شامل ہے۔

    ساتھی انسانوں کے حقوق پر قرآن

    اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید کی متعدد آیات میں ساتھی انسانوں کے حقوق کی اہمیت بیان کی ہے۔ ہم یہاں ان میں سے ایک دو کا ذکر کریں گے۔

    صرف اللہ کی عبادت کرو اور اس کے سوا کسی اور کی عبادت نہ کرو۔ اپنے والدین کے ساتھ، رشتہ داروں کے ساتھ، یتیموں کے ساتھ، مسکینوں کے ساتھ، قریبی اور دور کے پڑوسیوں کے ساتھ، مسافروں کے ساتھ اور جو تمہارے پاس ہیں ان کے ساتھ حسن سلوک کرو

    قرآن باب 4: آیت 36

    نیکی کا مطلب صرف مشرق یا مغرب کی طرف منہ کرنے میں نہیں ہے۔ سچے اچھے وہ ہیں جو خدا پر اور یوم آخرت پر، فرشتوں پر، کتاب پر اور انبیاء پر ایمان رکھتے ہیں۔ جو اپنے مال میں سے خواہ کتنا ہی پیارا ہو، اپنے رشتہ داروں، یتیموں، مسکینوں، مسافروں اور مانگنے والوں کو اور غلاموں کو آزاد کرنے کے لیے دے دیتے ہیں۔ جو نماز قائم کرتے ہیں اور غریبوں کو صدقہ دیتے ہیں۔ جو معاہدوں کا احترام کرتے ہیں جب بھی وہ معاہدے کرتے ہیں, جو مصیبت اور خطرے کے وقت صبر کرتے ہیں۔ یہ وہ لوگ ہیں جو سچے ہیں (خدا پر ایمان رکھتے ہیں) اور وہی خدا سے واقف ہیں

    قرآن باب 2: آیت 177

    حضرت محمد ﷺ کے ارشادات

    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ساتھی انسانوں کے حقوق کی اہمیت پر بھی زور دیا ہے۔

    حضرت محمد نے فرمایا:

    وہ شخص جنت میں نہیں جائے گا جس کا پڑوسی اس کی برائیوں سے محفوظ نہ ہو۔

    صحیح مسلم

    حضرت محمد نے فرمایا:

    کوئی اس وقت تک ایمان نہیں لا سکتا جب تک کہ وہ دوسروں کے لیے وہی خیر نہ چاہے جو اپنے لیے چاہتا ہے۔

    صحیح بخاری ۔

    حضرت محمد نے فرمایا:

    مومن وہ ہے جس سے لوگوں کی جان و مال محفوظ رہے۔

    سنن نسائی

    جب ہم قرآن مجید کی آیات اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات کا مطالعہ کرتے ہیں تو اس میں کوئی شک نہیں رہ سکتا کہ ہم پر اپنے ہم انسانوں کی بہت بڑی ذمہ داری ہے اور اس ذمہ داری کو صحیح طریقے سے ادا کرنا موت کے بعد کی زندگی میں ہماری کامیابی کے لیے بہت ضروری ہے۔

    واقعی دیوالیہ کون ہے؟

    قیامت کے دن اللہ تعالیٰ انسان سے دونوں حقوق یعنی حقوق الله اور ساتھی انسانوں کے حقوق کے بارے میں سوال کرے گا۔ حقوق الله میں کوتاہیوں پر اللہ تعالیٰ بندے کو معاف کر دے گا، لیکن ساتھی انسانوں کے حقوق کی کوتاہیوں کے لیے اللہ تعالیٰ اس بات کو یقینی بنائے گا کہ ظالم اور مظلوم کے درمیان حساب و کتاب مکمل طور پر طے ہو جائے۔

    حضرت محمد نے فرمایا:

    کیا آپ جانتے ہیں کہ دیوالیہ کون ہے؟ لوگوں نے کہا: دیوالیہ وہ ہے جس کے پاس نہ مال ہو نہ دولت۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (حقیقی) دیوالیہ وہ ہے جو قیامت کے دن ڈھیروں نمازوں، روزوں اور صدقات کے ساتھ آئے گا لیکن چونکہ اس شخص نے دوسروں کو گالی دی، دوسروں کی عیب جوئی کی اور دوسروں کا مال ناجائز طور پر کھایا، قتل کیا اور مار پیٹ کی۔ اس کے تمام اچھے اعمال لوگوں کے کھاتوں میں جمع ہوں گے (جو اس کے برے اعمال سے متاثر ہوئے تھے)۔ اور اگر اس کے اچھے اعمال کافی نہ ہوں تو ان لوگوں کے گناہ (اس کے کھاتے) میں داخل ہوں گے اور اسے جہنم کی آگ میں ڈال دیا جائے گا

    صحیح مسلم

    ہم اس سے کیا سیکھتے ہیں؟

    ہمیں انسانی حقوق کو اتنی ہی اہمیت دینی چاہیے جیسی ہم حقوق اللہ کو دیتے ہیں۔ یاد رکھیں، کوئی شخص صرف اس لیے جنت میں نہیں جائے گا کہ اس نے نماز پڑھی اور روزہ رکھا۔ یہ بھی اتنا ہی ضروری ہے کہ انسان اپنے ساتھی انسانوں کے ساتھ بھی اچھا ہو۔

    جب لوگ خدائی انصاف کے اس پہلو کو سمجھیں گے اور اسے عملی جامہ پہنائیں گے تو یہ ایک اخلاقی، محبت کرنے والے اور خیال رکھنے والے معاشرے کی راہ ہموار کرے گا۔

    خلاصہ

    1. قیامت کے دن ہم سے دونوں فرائض کے بارے میں پوچھ گچھ اور فیصلہ کیا جائے گا، یعنی ہم انسانوں کے حقوق خدا کے حقوق۔
    2. ہمارے ساتھی انسانوں کے ساتھ انصاف اور صحیح سلوک کرنے کے لئے خدا نے جو فرض دیا ہے اسے پورا کرنے کا نتیجہ وہی ہوگا جو ہمیں قیامت کے دن ملے گا(جنت یا جہنم) ۔
    3. جب لوگ ساتھی انسانوں کے تئیں اپنے فرائض کا احساس اور تندہی سے عمل کرنے لگیں گے تو معاشرہ رہنے کے لیے ایک زیادہ اخلاقی، محبت کرنے والا اور خیال رکھنے والا مقام بن جائے گا۔

    مضامین جن میں آپ کی دلچسپی ہو سکتی ہے۔

    دوسرے لوگ كيا پڑھ رہے ہیں۔